The Universe # 008 | Europa Clipper Mission and Jupiter Moon Io | Faisal Warraich

ہم سے ستر کروڑ کلومیٹر دور ایک سمندر ہے یہ سمندر بیس سے پچیس کلومیٹر موٹی برف کی تہہ میں لپٹا ہوا اور اوسطاً ایک سو کلومیٹر گہرا ہے اس میں اتنا پانی ہے کہ ہماری دنیا کے تمام سمندر اس سے کم از کم دو مرتبہ بھرے جا سکتے ہیں جب اتنا پانی ہے تو پھر کیا اس میں ہمارے سمندروں کی طرح بڑی بڑی وہیل مچھلیاں بھی ہوں گی؟ یا پھر چھوٹی چھوٹی مچھلیاں؟ مگر اتنے ٹھنڈے سمندر میں، سورج سے اسی کروڑ کلومیٹر دور زندگی کیسے ممکن ہے؟ اور اگر ہے بھی تو ہم اتنی موٹی برف کی تہہ کے نیچے کیسے جھانکیں گے؟ کون پاگل ہیں جو ایسی مہم جوئی سوچتےہیں میں ہوں فیصل وڑائچ اور دیکھو سنو جانو کی کل کائنات سیریز کی آٹھویں قسط میں ہم آپ کو یہی سب دکھائیں گے کسی عمر رسیدہ بوڑھے کے جہاندیدہ چہرے جیسا یہ ٹیکسچر مشتری کے چاند یوروپا کی سطح، سرفیس ہے۔ اس کو غور سے دیکھیں۔ بلکہ اس اینگل سے دیکھیں یوروپا کی برفیلی سطح سے پھوٹتے فوارے کئی کئی کلومیٹر اوپر تک چلے جاتے ہیں، بلکہ ان کے بخارات خلا میں بکھر جاتے ہیں۔ گلیلیو سپیس کرافٹ جس کی کہانی ہم آپ کو چھٹی قسط میں دکھا چکے ہیں جب یوروپا کے بہت قریب پرواز کر رہا تھا تو وہ ان پانی کے بخارات میں سے گزرا تھا جس سے ہمیں پتا چلا کہ یہ بالکل پانی جیسے قطرے ہی ہیں لیکن وہ تو محض اتفاق تھا۔ اب اس پانی کو باقاعدہ سائنٹفیکلی چیک کرنے کے لیے اور اس میں زندگی کے آثار تلاش کرنے کے لیے ناسا کا ایک نیا میشن سپیس مشن تیار ہو رہا ہے۔ اس مشن کا نام ہے یوروپا کلپر۔ اور اسے دوہزار تئیس سے پچیس کے درمیان لانچ کیا جائے گا۔ پھرتین سے چھے سال میں کروڑوں کلومیٹر کا فاصلہ طے کر کے جیوپٹر، سیارے مشتری کے قریب پہنچے گا۔ یہاں سے یہ جیوپٹر کے چاند یوروپا کے گرد پنتالیس، فورٹی فائیو چکر لگائے گا۔ لیکن ان تمام چکروں میں یہ یوروپا کی برفیلی سطح کے بہت قریب ہو گا، اور ان گنت لاتعداد تصاویر لے کر ڈیپ سپیس نیٹ ورک سے زمین پر بھیجے گا۔ کلپر سپیس کرافٹ بغیر لینڈ کیے یوروپا کی سطح سے نکلنے والےفواروں کے قطروں کو، ڈراپس کو، سائنٹیفکلی ٹیسٹ بھی کرے گا کہ آیا یہ واقعی ہمارے پچھلے اندازوں کے مطابق ایچ ٹو او ہی ہیں؟ اور یہ ہے وہ سپیس کرافٹ جو یہ سب کرے گا۔ آپ ذرا سے غور سے دیکھئے۔ یہ ابھی تکمیل کے مراحل میں ہےاس کی فنیشنگ ہو رہی ہے، لیکن ہم آپ کو اس کی مختصر سی سیر کروتے ہیں۔ یوروپا کلپر کے یہ لمبے بازو دراصل سورج کی شعاعوں سے توانائی لینے کے لیے ہیں۔ اسی انرجی سے توانائی سے یہ سپیس کرافٹ کام کرتے رہنے کے قابل ہو گا۔ یہ لمبی راڈز وہ ریڈار ہیں جو یوروپا کی برفیلی سطح کے نیچے ریڈیو ویوز بھیج کر معلوم کریں گی کہ برف کی تہہ کہاں سے کتنی موٹی ہے، اس موٹی برفانی تہہ کے نیچے اور اس کے اندر چھپا ہوا کتنا پانی ہے؟ اس کے نیچےاس اسپیس کرافٹ کی نیچھلی سطح پر ہائی ریزولیشن کیمرہ نصب ہے۔ یہ کیمرہ ایک خاص کیمرہ ہے جو سٹیریوسکوپ، یعنی تھری ڈی ٹائپ امیج بناتا ہے، جس میں سین کی ڈیپتھ بھی دکھائی دیتی ہے جیسے تھری ڈی فلمز میں ہوتا ہے۔ کلِپر سپیس کرافٹ یوروپا کے گرد چکروں کے دوران اس سے تصاویر بنائے گا جس سے ہم اس اہم چاند کا ایک تفیصلی نقشہ بنا سکے گئے۔ اسی نقشے کو سامنے رکھتے ہوئے اور پرانے نقشے کو دیکھتے ہوئے یہ پتا لگائے گا کہ اتنے برسوں میں یوروپا کی سطح پر کیا تبدیلیاں آئی ہیں۔ اور یہ بہت واضح اور بڑا وہ انٹینا ہے۔جس کے ذریعے کیمرے اور سنسرز کی تمام معلومات ڈیپ سپیس نیٹ ورک سے زمین پر پہنچیں گی۔ تو دوستو مختصر یہ کہ اس سپیس کرافٹ پر مختلف قسم کے سنسرز سمیت کل نو آلات لگائے جا رہے ہیں

جن کا الٹی میٹ مقصد ایک ہی ہے۔ یہ جاننا کہ کیا یورپا کی سطح کے نیچے کوئی زندگی موجود ہے؟ اس کی برفیلی تہہ کے نیچے مچھلیاں تیر رہی ہیں یا نہیں؟ اور دوسری بات یہ کہ اس کے اوپر وہ کون سی جگہ ہے جہاں ہم لینڈ کر سکتے ہیں؟ جی ہاں صرف فلائی بائی ہی نہیں ایک لینڈر مشن بھی پرپوزڈ ہے۔ یہ لینڈر تجویز کے مطابق سپیس کرافٹ سے الگ ہو جائے گا اور پھر اپنے سسٹم سے یوروپا کی برفیلی سطح پر ایک کیکڑے کی طرح گرے گا۔ جہاں اس کے لمبے لمبے بارز برف کو کرید کر اس میں بائیو سگنیچر، یعنی زندگی کے آثار تلاش کریں گے۔ کیونکہ اگر اب تک کی تحقیق کے مطابق یوروپا کی سطح کے نیچے نمکین پانی کا بہت بڑا سمندر ہے، اور اس میں زندگی کا امکان ہے تو پھر اس کی سطح پر بھی اس کا کچھ نہ کچھ اثر ضرور ہونا چاہیے۔ کیونکہ آپ دیکھ چکے ہیں کہ یوروپا کا سمندر اس کی برفیلی سطح سے فواروں کی طرح پھوٹتا رہتا ہے۔ اور اس کا پانی اس برف پر گرتا رہتا ہے۔ لیکن مسئلہ یہ ہے کہ اس لینڈر کے لیے ناسا کی پاکٹ منی شارٹ ہو گئی ہے۔ لینڈر کے شامل ہو جانے سے اس مشن کی لاگت بہت بڑھ جائے گی۔ اس پر دو ارب ڈالر، ٹو بلین ڈالرز سے زیادہ خرچ اٹھے گا، اس لیے فی الحال یہ مشن پیسے اکٹھے کرنے کے مشن پر ہے۔ لینڈر کے بعد تیسرا پرپوزڈ مرحلہ ہے یوروپا کے سمندر میں آبدوز اتارنا۔ یہ آبدوز اسی لینڈر کا حصہ ہو گی۔ اسے یوروپا کے گہرے ٹھنڈے سمندر میں اترنے کے لیے پہلے بیس سے پچیس کلومیٹر موٹی برف کی تہہ کو چیرنا ہو گا۔ پھر اس کے نیچے موجود اس سمندر میں جانا ہو گا جس کی اوسطاً گہرائی ایک سو کلومیٹر ہے۔ یہ گہرائی ہمارے زمینی سمندروں سے کئی گنا زیاد ہے۔ کیونکہ ہماری زمین پر سب سے گہری جگہ بھی جیسا کہ آپ جانتے ہیں ماریانہ ٹرنچ ہے جو گیارہ کلومیٹر سے کچھ ہی گہری ہے۔ تو اتنے گہرے سمندر میں جو بھی سب میرین، آبدوز بھیجی جائے گی وہ اس قابل ہونی چاہیے کہ ملینز آف کلوگرام، دسیوں لاکھوں کلوگرام پانی کا دباؤ برداشت کر سکے اور اس دباؤ میں اس کے آلات بھی بالکل درست کام کریں۔ اب دیکھیں کہ ہماری زمین کے سمندوں میں عام طور پر جو سب میرینز تیرتی ہیں، وہ سطح سمندر سے صرف چند سو فیٹ ہی نیچے کام کرتی ہیں۔ اور اس کے لیے بھی امریکہ اور روس میں مقابلہ رہتا ہے کہ کون دوسرے سے محض چند فیٹ اور گہرائی میں تیرنے والی آبدوز بنا لے۔ کیونکہ سمندر میں جتنا نیچے جاتے ہیں، پانی کا دباؤ اتنا ہی زیادہ ہوتا چلا جاتا ہے، جس کے لیے آبدوز کی باڈی اور دوسرے آلات اتنے ہی سخت جان بنانا پڑتے ہیں یعنی جتنی زیادہ گہرائی اتنی مضبوط آبدوز چاہیے اب ذرا کمپیریزن کریں کہاں ہمارے سمندروں کی میکسیمم گیارہ کلومیٹر گہرائی اور کہاں یوروپا کا سو کلومیٹر گہرا سمندر۔ پھر اس پر بیس پچیس کلومیٹر موٹی برف کی تہہ کا وزن الگ۔ اتنا دباؤ برداشت کرنے والی آبدوز بنانے کا تو کبھی انسان نے سوچا بھی نہ ہو گا۔ لیکن اب نہ صرف سوچنا ہے بلکہ بنانا بھی ہے۔ یعنی ایک نئی ایجاد کرنا ہوگی جو یوروپا کے سمندر کی سردی اور گہرائی میں کام کر سکے۔ وہاں روشنی کر کے تصاویر بنا سکے، وہاں کے پانی کو ٹیسٹ کر سکے اور پھر تمام معلومات زمین پر بھیج سکے۔ اور اس سب کے لیے توانائی بھی یوروپا کو وہی سے حاصل کرنا ہو گی۔ کیونکہ زمین سے تو اتنا زیادہ فیول یا بیٹریاں ساتھ نہیں بھیجی جا سکتیں کیونکہ جس راکٹ سے سپیس کرافٹ کو خلا میں بھیجا جاتا ہے اسے ایک خاص حد سے زیادہ ہیوی نہیں کیا جا سکتا۔ پھر یہ سب کیسے ہو گا؟ بظاہر کتنا مشکل کام لگتا ہے۔ لیکن دوستو آسان کام کرنا کسے ہے؟ مشکلوں سے گزرنے والے مشکلوں سے کھیلنے والے ہی تو نئے راستے تلاش کرتے ہیں، اور سب سے پہلے اس کے لیے پلاننگ کرتے ہیں۔ سو جب یوروپا مشن کی ایک سینیر سائنٹس آسٹروبائیولوجسٹ مورگن کیبل سے یہی سوال پوچھا گیا تو انھوں نے کہا کہ اس پر ناسا سمیت بہت سے دوسرے انجینئرز بھی کام کر رہے ہیں۔

جن تیکنیکس پر کام ہو رہا ہے ان میں سے ایک یہ ہے کہ سبمیرین جو بنائی جائے گی اس کی ٹپ کو مسلسل گرم رکھنے کی تکنیک اپنائی جائے گی تا کہ وہ برف کو آسانی سے کاٹتی ہوئی نیچھے چلی جائے پھر ایک بہت لمبی اور مضبوط کیبل کے ذریعے اس آبدوز کی تصاویر اور معلومات اوپر موجود لینڈر تک جائیں گی۔ وہاں سے اسپیس کرافٹ اور پھر ہماری زمین پر ان کی یہ گفتگو اسی سال مارچ کی ہے۔ جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ابھی ناسا کچھ ظاہر نہیں کرنا چاہ رہا، اس ٹیکنالوجی کو کچھ چھپا رہا ہے۔ شاید وجہ یہ ہو کہ یوروپا لینڈر مشن کے لیے اربوں ڈالرز کے فنڈز چاہیں، جن کا کچھ حصہ ابھی حاصل کرنا باقی ہے۔ اگر ٹیکنالوجی فائنل ہونے سے پہلے امیچور نامکمل آئیڈیا کے طور پر لیک ہو گی تو مخالفین کے ہاتھوں ایک ایشو آ جائے گااور متنازعہ ہو کے یہ معاملہ فنڈز کی بندش کا باعث بھی بن سکتا ہےفنڈز رک بھی سکتے ہیں اس لیے شاید کچھ ماہ اور ناسا اپنی تیاری چھپائے گا، اور پھر شاید بتائے گا۔ لیکن انسان کے تخیل کو کیا کیجئے کہ اس نے تو تب سے پرواز بھرنا شروع کر دی تھی جب یورپا کی سطح کے نیچے سمندر کی ابھی بات شروع ہوئی تھی۔ دوہزار تیرہ میں اسی تصور پر ایک فلم یوروپا رپورٹ بن چکی ہے، جس میں آسٹروبائیالوجسٹ کا ایک گروپ یوروپا پر اترا لینڈنگ کی اس نے وہاں زندگی کی کامیابی سے تلاش کی اور کہانی کے مطابق انہوں نےجانیں بھی دیں اگر آپ سائنس فکشن موویز پسند کرتے ہیں تو یوروپارپورٹ ضرور دیکھئیے گا۔ اس کے ساتھ آرٹسٹ کنسیپٹس بھی تیار ہو رہے ہیں جن میں وہ تھیوریز پیش کی جاتی ہیں کہ کس طرح انسان یوروپا کے سمندر کے نیچے جا کر خود اپنی آنکھوں سے زندگی تلاش کر سکتا ہے۔ دوستواس مشن کا کچھ سال انتظارکرتے ہیں لیکن ہم اب یورپا کے تخیل سے باہر نکلیں گے اور اس کے قریب سے گزرتے ہوئے ایک اور چاند کو دیکھیں گے۔ اگر یوروپا پر برف ہی برف ہے تو اس کے ہمسائے چاند پر آگ ہی آگ ہے۔ اور یہی ہے اور یہی ہے سانگ آف آئیس اینڈ فائر ہمارے نظام شمسی، سولرسسٹم میں سب سے زیادہ آتش فشاں اگر کسی جگہ پر ہیں تو وہ یہی جیوپیٹر کا چاند آئیو ہے۔ آئیو پر موجود آتش فشاں سینکڑوں کی تعداد میں ہے۔ اور ان سے پگھلا ہوا لاوا ابلتا رہتا ہے، آگ کے ایسے فوارے پھوٹتے ہیں جو درجنوں کلومیٹر اوپر تک جاتے ہیں اور جب نیچے گرتے ہیں تو کئی کئی سو کلومیٹر طویل کھلوتے لاوے اور پگھلی چٹانوں کی جھیلیں بن جاتی ہیں۔ ہماری زمین پر بھی لاوے کی کچھ جھیلیں ہیں، لیکن اتنی بڑی جھیلیں؟ سوال ہی پیدا نہیں ہوتا لیکن کیا یہ بے پناہ حیرت کی بات نہیں کہ آئیو جو جیوپٹر کا چاند ہے، جو سورج سے اسی کروڑ کلومیٹر دور ہے جس کے قریب ہی اس کے ساتھی چاند پر پچیس کلومیٹر موٹی برف کی تہہ ہے، تو پھر اس پر جو تقریباً اسی جگہ ہے اتنی آگ، اور اتنی تپش کیوں؟ آخر کیوں ؟ آئیو کے ساتھ مسئلہ یہ ہے کہ یہ دو بڑی طاقتوں قوتوں کے درمیان پھنس گیا ہے۔ آئیو کا چاند درمیان میں ہے، اور اس کے ایک طرف بے پناہ طاقتور اور کشش والا اس کا اپنا سیارہ مشتری جیوپٹر ہے اور دوسری طرف یوروپا اور گینی میڈ کے چاند ہیں۔ سو ایک طرف جیوپٹر کی کشش اور دوسری طرف ان دونوں چاندوں کی کشش تو ان دونوں کی کشش سے جو ٹائیڈل موومنٹ اور کھچاؤ مسلسل آئیو کی سطح پر پیدا ہوتا ہے اس سے اس کا اندرونی حصہ بہت گرم ہو جاتا ہے۔ جولاوے اور گیسز کی صورت میں باہر نکلتا ہے اور جو اس سے باہر نکلتا ہے اس سے آئیو کی فضا میں ایک ایسی گیس پھیلتی ہے جس سے بہت سے لوگ راتوں رات امیر ہو سکتے ہیں۔ کیونکہ یہ سلفر ڈائی آکسائیڈ ہے یہ وہی کمپوننٹ ہے جو ہم زمین پر ڈرائی فوڈز کو محفوظ کرنے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ اگر آپ ایک بزنس مین ہیں تو اس آئیڈیا پر غور کیجئے۔ بس اسی نوے کروڑ کلومیٹر کی ایک پائپ لائن ہی تو بچھانی ہے اور کچھ بھی نہیں

ہاں اگر اس انٹرپرینیورشپ کے لیے آپ کو مزید کچھ معلومات چاہیں، تو یوروپا کلپر کو لکھ بھیجیں کیونکہ یوروپا کے لیے جانے والا سپیس کرافٹ تین سے پانچ بار آئیو کے گرد بھی گردش کرے گا۔ ہم زندگی کی تلاش میں کروڑوں کلومیٹر دور آ گئے ہیں۔ لیکن اس دہکتے، ابلتے چاند پر تو زندگی کیا پانی تک کا کوئی امکان نہیں۔ سو ہم آئیو اور اس کے سیارے مشتری کویہی چھوڑتے ہوئے آگے بڑھتے ہیں۔ لیکن جانے سے کچھ پہلے ہم کچھ فاصلے سے ہم م م م م ۔۔۔ یہاں سے ذرا رک کر جیوپٹر کے حُسن کو ایک بار پھر دیکھ لیتے ہیں۔ کیا ہی خوبصورت رنگوں سے مزین سیارہ ہے اور کیا ہی خوبصورت سرخ دائرہ ہے۔ یہ گھومتا رنگین دائرہ نامعلوم زمانوں سے ایسے ہی جیوپیٹر کی سطح پر چکرائے جا رہا ہے۔ یہ دراصل گیس کا ایک عظیم طوفان ہے جو صدیوں سے بیٹھنے کا نام ہی نہیں لے رہا۔ ہاں تھوڑا تھم ضرور رہا ہے۔ کیونکہ کبھی اتنا بڑا تھا کہ اس طوفانی دائرے میں ہماری زمین جیسی تین زمینیں سما سکتی تھیں، لیکن اب یہ چھوٹا ہو کر ایک زمین جتنا رہ گیا ہے۔ یہ طوفان کیوں ہے؟ اس کی تہہ میں کیا ہے؟ یہ اور ایسا اور بہت کچھ ہے جو ہم نہیں جانتے۔ ہم اور بھی بہت کچھ نہیں جانتے۔ لیکن اگر آپ برا ناں مانیں تو اسے ذرا دور سے ایک بار پھر اسے دیکھ لیتے ہیں۔ کیونکہ منظر ہو یا واقعہ جتنا بڑا ہو اتنے فاصلے سے ذرا بہتر سمجھ میں آتا ہے۔ اوہ مائی گاڈ جیوپٹر سے دور بہت دور یہ اربوں پتھر، بلینز اینڈ بیلنز آف فلائنگ روکس جیوپیٹر کے قریب ایک دائرے میں کیوں گھوم رہے ہیں؟ یہ کیا چکر ہے؟ یہ مریخ اور جیوپٹر کے درمیان پتھروں کا گھومتا ہوا دائرہ ہے ۔ اسے ایسٹرائیڈ بیلٹ کہتے ہیں۔ یہ ایسٹرائیڈز، وہ اربوں چھوٹے بڑے پتھر ہیں جو نظام شمسی کے قیام کے وقت آپس میں جڑ کر کوئی بڑا سیارہ یا سیارے نہیں بنا سکے۔ بس سورج اور جیوپیٹر کی کشش کے درمیان پھنس کر رہ گئے دائرے میں گھومنے لگے۔ لیکن جیوپٹر کی جناتی طاقت سے یہ کبھی محفوظ نہیں رہے۔ اسی طاقت کے باعث کئی بار ایسٹرائیڈ بلیٹ سے کچھ پتھر کھسک جاتے ہیں۔ اور سورج کی طرف گرنے لگتے ہیں۔ پھر ان کے راستے میں جو سیارہ یا چاند آ جائے اس سے ٹکرا جاتے ہیں۔ اور جن سیاروں سے ٹکراتے ہیں ان میں سے ایک ہماری زمین بھی ہے۔ دس کروڑ سال پہلے دس کلومیٹر بڑا ایک ایسا ہی ایسٹرائیڈ زمین سے ٹکرایا تھا۔ اس وقت ہماری زمین زندگی سے بھر چکی تھی، یہ بڑے بڑے ڈائنوسارز گھاس کے میدانوں میں گھومتے تھے۔ اور یہ جہازی سائز کے پرندے ہواؤں میں پر تولتے تھے۔ بس میملز، ممالیہ جانور ذرا چھوٹے تھے، بلکہ بہت ہی چھوٹے تھے۔ یہ ہاتھی، رائینوز، گینڈے، ہیپوز، دریائی گھوڑے ان جیسے بڑے بڑے میملز ابھی ایوالو نہیں ہوئے تھے وجہ یہ تھی کہ خوراک کا بڑا حصہ ڈائنوسارز جیسے دیوقامت جانور کھا جاتے تھے۔ سو یہ دس کلومیٹر بڑا پتھر جو دراصل سورج کی طرف بڑھ رہا تھا، راستے میں ہماری زمین سے ٹکرا گیا۔ جس جگہ یہ زمین سے ٹکرایا وہاں سے ایک ہزار کلومیٹر چاروں طرف ہر زندہ شے ختم ہو گئی۔ پھر اس دھماکے سے جو گرد اور آتشی طوفان اٹھا اس نے آسمان کو گھیر لیا اور زمین پر ایک لمبی سردرات چھا گئی۔ اسے تاریخ میں نیوکلئر ونٹر کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اسی نیوکلئیر ونٹر کے دوران زمین پر موجود پچھتر فیصد جانداروں کی نسلیں ہی ختم ہو گئیں۔ ان کی سپیسز انواح صفحہ ہستی سے مٹ گئیں، اِیکسٹنکٹ ہو گئیں۔ خاص طور پر وہ جانور جو سائز میں بڑے تھے، کسی کھو میں یا غار میں چھپ کر لمبی سرد رات نہیں گزار سکتے تھے۔ اور انھیں خوراک بھی بہت زیادہ چاہیے تھی جو پھر دستیاب نہیں تھی سو وہ سب ختم ہو گئے۔ جب نیوکلئیر ونٹر چھٹی تو بڑے بڑے جانوروں کے ختم ہو جانے سے، کچھ ہی برسوں میں زمین پر خوراک اضافی ہو گئی چھوٹے چھوٹے میملز کو بڑھنے کا موقع ملا اور زمین پر زندگی نے ایک اور ترنگ سےکروٹ لی۔

اِس وقت زمین پر موجود زندگی کی ہر شکل اُسی حادثے کے بعد کی ارتکاشدہ پیدوار ہے۔ تو دوستو، ہر تبدیلی ایک نئے جہان کو جنم دیتی ہے اور ہر نیا جہان اپنے اندر ایک تباہی کا بیج ضرور رکھتا ہے۔ یہ کانئانت کی فطرت ہے۔ لیکن آپ بس یہ سوچیے کہ اگر جیوپٹر کی گریویٹی اس وقت یہ کر سکتی تھی تو کیا اب ایسا نہیں کرسکتی؟ ہو سکتا ہے کسی بھی وقت ہو سکتا ہے۔ سو زندگی کے ہر لمحے کو جی بھر کے جیئے اور جینے دیجئے۔ ہم اسٹرائیڈ بیلٹ، سیاروں کے بادشاہ جیوپٹر اور اس کے گرم سرد چاندوں کو نظر انداز کرتے ہوئے وہاں چلتے ہیں جہاں منظر بہت ہی دلکش ہے۔ ہم کروڑوں کی گنتی سے آگے نکل آئے ہیں ہمارے سامنے وہ سیارہ ہے جو سورج سے ایک ارب انچاس کروڑ کلومیٹر پرے، ون پوائنٹ فور نائن بلین کلومیٹرز دور ہے۔ ہم اس سپیس کرافٹ کے ساتھ ساتھ چلتے ہیں، لیکن نہیں یہ سپیس کرافٹ کسینی ایک ایسا کام کرنے والا ہے جو اس سے پہلے کبھی کسی نے نہیں کیا۔ یہ ایسا مشن پر جا رہا ہے جس کے لیے اسے تیار ہی نہیں کیا گیا لیکن اس میشن کے لیے انیس ملکوں کے بہترین دماغوں کی محنت داؤ پر لگی ہوئی ہے۔ یہ میشن کیا تھا اور کیا یہ کامیاب ہوا؟ یہ سب آپ کو دکھائیں گے لیکن کل کائنات، دا یونیورس سیریز کی نویں قسط میں جس کے لیے یہاں ٹچ کیجئے یہاں جانئے کہ یوروپا کا نام آخر یوروپا کیوں ہے؟ یہ رہی وہ کہانی جب آپ کو کسی نے سیارے کے شہنشاہ جیوپٹر میں دھکا دے دیا تھا۔